“میرا بچپن جہاں گزرا وہ بستی چھن گئی کیوں کر “

IMG_20140805_150258

کچھ روز پہلے چک سکندر جانے کا اتفاق ہوا. ایسے میں کے ابھی گجرانوالہ کے واقعہ کو زیادہ عرصہ نہیں گزرا تھا چک سکندر والوں کے ٢٥ سال پہلے کے زخم پھر سے ہرے ہو گۓ . ہر ایک کی زبان پر گجرانوالہ والوں کے لیے دعائیں تھیں کیوں کہ وہ یہ سب خود اپنے ساتھ ہوتا دیکھ چکے تھے . ایسے میں وہاں کے لوگوں کی زبانی ایک بار پھر سے ظلم کی داستان سننے کا موقع ملا . وہ داستان ، لوگوں کے جذبات و احساسات اشعار کی صورت میں مندرجہ ذیل ہیں

میرا بچپن جہاں گزرا وہ بستی چھن گئی کیوں کر
وہ بستی چھن گئی یوں کر

کہ اس بستی کے لوگوں کو
میرے ایمان سے نفرت تھی
میرے اسلام سے نفرت تھی
تھا انکے عمل سے ظاہر
انھیں انسان سے نفرت تھی

لگا کر آگ جلا دیے گھر
لوگوں کو کر کے دربدر
سوچیں عقل کے اندھے گر
کیا یہی درس دیتا ہے بدر

ہر ایک غریب کو ستایا
بچوں کو بھی دھمکایا
دروازوں کو کر کے بند
پھر آگ سے گھر کو سلگایا

محافظ ملے ساتھ ہی پھر
گولی چلی سر عام تھی پھر
ساقی و رفیق کو کر کے شہید
ہولی کھیلی لہو کی پھر

اسباب خوب وہاں لوٹا
ہر  کھڑکی دروازہ ٹوٹا
نبیلہ کے لہو نے پھر
جنّت کا سینچا بوٹا

کائنات حرا بشریٰ کی داستان

اسی طور هوئیں جو قربان
اسلام کے ٹھیکداروں نے

رکھا یونهی ظلم رواں

دکھ سب کے ہمارے اپنے ہیں
ہم نے ہی مرہم رکھنے ہیں
اور دعاوں سے لرزہ کےافلاک
رحم کے جام الٹنے ہیں

بلآخر میرے مولا کی تقدیر ہی غالب آئے گی
شان سے پھر ایک روز یہاں،مسیح کی جماعت آئے گی
ظالم مت بھولیں بلآخر مظلوم کی باریآئے گی
اور بچنے کی ہر راہ مسدود کی جاۓ گی

“Mayra Bachpan jahan Guzara woah basti chin gai kiyun kar.”

IMG_20140805_145602

Woah Basti chin gai youn kar.
K us basti k logon ko.

Mayray Iman say nafrat thi.
Mayray Islam say nafrat thi.
Tha unkay amal say zahir.
Unhaen Insan say nafrat thi.
Laga kar agg jala diye ghar.
Logon ko kar k dar badar.
Souchen aqal k andhay gar
Kia yahi dars dayta ha Badar.?

Har ik ghareeb ko sataya.
Bachoun ko bhi dhamkaya.
Darwazon ko kr k band
Phar agg say ghar ko sulgaya.

Muhafiz b milay sath hi phair.
Goli chali sar e amm thi phair.
Saqi o Rafique ko kar k saheed
Holi khyli lahoo ki phair.

Asbaab khaoab wahn loota.
Har khirki darwaza toota.
Nabeela kay lahoo nay phar
Jannat ka sencha boota.

Kianat,Hira o Bushara ki Dastan.
Isi toar huen jo Qurban
Islam kay thakaydaron nay
Rakha Yunhi Zulam rawan.

Dukh sub kay Hamray Apnay hain.
Hum nay hi Marham rakhnay hain.
Aur Duawon say larza k Aflaq.
Reham k Jaam ultnay Hain.

Bil Akher Mayray Mola ki,Taqder hi Ghalib aay gi.
Shaan say phair ik roaz yahn,Masih ki jammat ay gi.
Zalim Maat bholaen Bil akhir,Mazlom ki bhari ay gi.
Aur bachnay ki har rah,masdood ki jay gi.
><><><><><><><><><><><><><><><><><><><><><><><

Advertisements