راه لقاء هے موت ملا دیتی هے یار سے
ختم هو جاتی هیں سب تکلیفیں وصال سے

گر کانپ اٹھے دل خوف سے عذاب کے
دلاسہ اس کو دیتی هوں مالک کی صفت تواب سے

گر ورق هوں خالی نامہ اعمال کے
ڈھانپ دیتا هے وه رؤف ایک حجاب سے

دامن دل خالی هوا تپش و آزار سے
تو نے هی سایہ کیا اسم وهاب سے

بخشش کی تجھی سے طلبگار هوں یارب
ناؤ تو میری پار لگانا سهار سے

Advertisements