Search

Qalam and Chai

Think Dream Read and Repeat

Category

Poetry

میرا مولا سارے میرے بگڑے کام بناتا هے

god-is-sufficient-for-us-calligraphy

پشیمان جب بھی پیاسا

 اس کے در پہ جاتا هے

 رحمت کا لیئے وه پیالا

 بھر بھر جام لٹاتا هے

 موڑ کے هواؤں کے رخ

ابر کرم برساتا هے

 میرا مولا سارے میرے

 بگڑے کام بناتا هے

گرمی افلاک کی لو سے

 اس کا سایہ بچاتا هے

 راستوں کے سبھی کانٹے

 اس کا فضل ہٹاتا هے

 نور کی اک دھار سے وه

گھر اپنا دکھلاتا هے

میرا مولا سارے میرے

 بگڑے کام بناتا هے

 در اک بند هو جاۓ اگر

 سو نئے کھلواتا هے

 بکھرے هوۓ سب پتوں کو

 هوا کے دم پے اڑاتا هے

 پھولوں کی مهک سے وه

 آنگن کو مسکاتا هے

 میرا مولا سارے

 میرے بگڑے کام بناتا هے.

Pasheman jub bhi payasa

 Uskay dar par jata ha

 Rehmat ka liay wo payala

 Bhar bhar jam lutata hai

 Moar k hawaon ka rukh

 Abr e karam barsata ha

 Mayra Mola Saray myry

 Bigray kam banata hai

 Garmi e aflaq ki lu sy

 Uska saya bachata ha

 Raston ky sabhi kanty

 Uska fazal hata’ta ha

 Noor ki ik dhar sy wo

 Dar apna dikhlata ha

 Myra mola saray mayry

 Bigray kam banata ha

 Dar ik band ho agr

 Su na’ay khulwata ha

Bikry huay sub paton ko

 Hawa k dam pay urata ha

Pholon ki mehak sy wo

 Angan ko muskata ha

 Myra mola saray myry

 Bigray kam banata ha.

میرا مولی میرا یار هو

17426369_1730494980594837_6686905703367451825_n

رحمتیں

شفقتیں

نہ دور هوں

راستے سب

فاصلے

پر نور هوں

تیری رضا میں هے بقا

تیری لقا روح کی شفاء

ان منزلوں کی سرد هوا

تیری اور لے جاۓ یوں بھگا

نہ غم رهے

نہ خار هو

میرا مولی میرا یار هو

میرے درد میں سہار هو.

Rehmaten

Shafqaten

Na doar hon

Rastay sb

Faslay

Pur noor hon

Teri raza

Hai baqa

Teri liqa

Roah ki shifa

In manzilon ki Sard hawa

Teri aour lay jay Youn bhaga

Na gham rahy

Na khar ho

Myra mola myra yaar ho

Myry dard main saha’r ho..

-مصباح

حوصلے اور خواهشیں

آس اور شکایتیں

راستہ

منزلیں

رات اور صبح کا شور

خار و گل و بلبل و مور

تشنگی کی ندی

غموں کی اک صدی

فرقت و الفت کا ساتھ

هے عجب قسمت کا هاتھ

پستیِ رفعت غم

فتحِ شکستہ دل

حالتِ اضطراب

هیں عجب دل کے یہ حال

حد و حکمت سے دور

قلب و ذہن کا فتور

راستے کے سبھی خار

هو کہ غم سے آشکار

کوچہ دل کے باب

زندگی کے عجیب راگ..

 

 

Hoslay aur khwahishen

Aas aur shikayaten

Rasta

Manzelen..

Raat aur subh ka shor

Khar o gul o bulbul o moar

Tishnagi ki nadi

Ghamon ki ik sadi

Furqat o ulfat ka sath

Ha ajb kismat ka hath..

Pasti e rifat e gham

Fatah e shikasta dil

Halat e iztirab

Hein ajab dil k yeah haal..

Had o hikmat say doar

Qalab o zayhan ka fator

Rastay k sabhi khar

Ho k gham sy ashkar

Kocha e dil k yeh baab

Zindagi k ajeeb raag…

 

سب رنگ کریں تجھ تک سفر

img_20170131_023750_013

 

سرو و سمن و باغ و بر

تیری قدرتوں کی دیں خبر

 

گل و بلبلوں سے سجے چمن

تیری شان جن میں جلوه گر

 

صحرا و دشت صبح و شب

تیری مصوریت سے هیں تر

 

مٹ جائیں اک پل میں سب

تیرے حکم سے,بھرے نگر

 

خالقیت سے بسا دے پھر

اک جہاں تو چاهے گر

 

قصہ رقص مور کے

سب رنگ کریں تجھ تک سفر

Saru o saman Bagh o bar

Teri qudraton ki daen khabr

 

Gul o bulbul sy sajay chaman

Teri shan jin main jalwagar

 

Sehra o dasht Subah o Shab

Teri “Musawiryt” sy  hain tar

 

Mit jaen ik pal main sub

Tera hukam sy bharay nagar

 

“Khaliqiyat” sy basa dy phir

Ik jahan tu chahay gaar.

 

Qisa e raks e mo’ar kay

Sub rang tujh tak karen safar.

میرا دل نظر اور میرے خواب

میرا دل نظر اور میرے خواب

میری منزلیں

میرے خواب سب

تیری یاد سے بندھے هوۓ

کسی ایک موڑ سے تر ہوا

تیری خشبوؤں کی مہک لیئے

جو ملے تو بس یہی کہے

تیرے ساتھ میرا جو ساتھ هے

بے حد و بے حساب هے.

میری کامیابیاں جو هیں سبھی

تیری شفقتوں سے لدی ہوئیں

تیری یاد کرتی هے بے قرار

تیری دعاؤں کے ثمار

هیں روز و شب میں بھرے هوۓ

میرا دل

نظر

اور میرے خواب

تیری یاد سے بندھے هوۓ

تیری آس سے لدے هوۓ.

Myri manzilen

Myry khwab sub

Teri yaad sy bandhy huay

Kisi ik mor sy tar hawa

Teri khushbon ki mehak liay

Jo a milay To bus yahi kahay

“Teray sath myra jo sath ha

Bayhad o bayhisab ha”

Myri kamyabiyan jo hain sabhi

Teri shafqaton sy ladi hui

Teri yad krti ha byqarar

Teri duawon k samaa’r

Hain roaz shab man bharay huay

Myra dil

Nazar

Aur myry khwab

Teri yaad sy bandhy huay..

Teri aa’s say lady huay..

راه لقاء هے موت ملا دیتی هے یار سے
ختم هو جاتی هیں سب تکلیفیں وصال سے

گر کانپ اٹھے دل خوف سے عذاب کے
دلاسہ اس کو دیتی هوں مالک کی صفت تواب سے

گر ورق هوں خالی نامہ اعمال کے
ڈھانپ دیتا هے وه رؤف ایک حجاب سے

دامن دل خالی هوا تپش و آزار سے
تو نے هی سایہ کیا اسم وهاب سے

بخشش کی تجھی سے طلبگار هوں یارب
ناؤ تو میری پار لگانا سهار سے

ته کرتا هے هر ایک هی
کئی مسهافتیں
زندگی کی راه پر
منزلیں
کئی شکایتیں
اپنے هی آپ سے
کئی گلے
منزلوں کی جستجو
خوف کئی روبرو
پا جاتا هے اسے وهی
راحت اسی کے هر سو
امید جسکی باقی هو
اور خوشیوں کا وه ساقی هو.

وه هم نوا

میرے ساۓ سا

میری آس جس کے ساتھ تھی

میری تلاش جس پہ تمام تھی

گھٹا وه جیسے سرد تھی

ادا وه تیری درد تھی

ایک پل میں

ایک بات سے

بنا اجنبی

وه هم نوا

جس سے میری آس تھی

میری تلاش جس پے تمام تھی.

بات تیرے ذکر سے خالی نہ تھی کبھی
رات تیری فکر سے خالی نہ تھی کبھی

حرف حرف وار سلگتا هوا جیسے
هر ضرب درد سے خالی نہ تھی کبھی

قلب و نظر نے دی تجھے هی پناه جهاں
هر جا اسکی عشق سے خالی نہ تھی کبھی

درد اک دل میں اٹھا هی دیتی هے
آه جو فریاد سے خالی نہ تھی کبھی

کاروبار الفت میں عقل بھی پٹختی هے
ره یار جو خار سے خالی نہ تھی کبھی

یقین سے بالاتر وجود یار لگے
وفا هیبت و کمال سے خالی نہ تھی کبھی.

Create a free website or blog at WordPress.com.

Up ↑

%d bloggers like this: