Search

Qalam and Chai

Think Dream Read and Repeat

میرا دل نظر اور میرے خواب

میرا دل نظر اور میرے خواب

میری منزلیں

میرے خواب سب

تیری یاد سے بندھے هوۓ

کسی ایک موڑ سے تر ہوا

تیری خشبوؤں کی مہک لیئے

جو ملے تو بس یہی کہے

تیرے ساتھ میرا جو ساتھ هے

بے حد و بے حساب هے.

میری کامیابیاں جو هیں سبھی

تیری شفقتوں سے لدی ہوئیں

تیری یاد کرتی هے بے قرار

تیری دعاؤں کے ثمار

هیں روز و شب میں بھرے هوۓ

میرا دل

نظر

اور میرے خواب

تیری یاد سے بندھے هوۓ

تیری آس سے لدے هوۓ.

Myri manzilen

Myry khwab sub

Teri yaad sy bandhy huay

Kisi ik mor sy tar hawa

Teri khushbon ki mehak liay

Jo a milay To bus yahi kahay

“Teray sath myra jo sath ha

Bayhad o bayhisab ha”

Myri kamyabiyan jo hain sabhi

Teri shafqaton sy ladi hui

Teri yad krti ha byqarar

Teri duawon k samaa’r

Hain roaz shab man bharay huay

Myra dil

Nazar

Aur myry khwab

Teri yaad sy bandhy huay..

Teri aa’s say lady huay..

راه لقاء هے موت ملا دیتی هے یار سے
ختم هو جاتی هیں سب تکلیفیں وصال سے

گر کانپ اٹھے دل خوف سے عذاب کے
دلاسہ اس کو دیتی هوں مالک کی صفت تواب سے

گر ورق هوں خالی نامہ اعمال کے
ڈھانپ دیتا هے وه رؤف ایک حجاب سے

دامن دل خالی هوا تپش و آزار سے
تو نے هی سایہ کیا اسم وهاب سے

بخشش کی تجھی سے طلبگار هوں یارب
ناؤ تو میری پار لگانا سهار سے

ته کرتا هے هر ایک هی
کئی مسهافتیں
زندگی کی راه پر
منزلیں
کئی شکایتیں
اپنے هی آپ سے
کئی گلے
منزلوں کی جستجو
خوف کئی روبرو
پا جاتا هے اسے وهی
راحت اسی کے هر سو
امید جسکی باقی هو
اور خوشیوں کا وه ساقی هو.

وه هم نوا

میرے ساۓ سا

میری آس جس کے ساتھ تھی

میری تلاش جس پہ تمام تھی

گھٹا وه جیسے سرد تھی

ادا وه تیری درد تھی

ایک پل میں

ایک بات سے

بنا اجنبی

وه هم نوا

جس سے میری آس تھی

میری تلاش جس پے تمام تھی.

بات تیرے ذکر سے خالی نہ تھی کبھی
رات تیری فکر سے خالی نہ تھی کبھی

حرف حرف وار سلگتا هوا جیسے
هر ضرب درد سے خالی نہ تھی کبھی

قلب و نظر نے دی تجھے هی پناه جهاں
هر جا اسکی عشق سے خالی نہ تھی کبھی

درد اک دل میں اٹھا هی دیتی هے
آه جو فریاد سے خالی نہ تھی کبھی

کاروبار الفت میں عقل بھی پٹختی هے
ره یار جو خار سے خالی نہ تھی کبھی

یقین سے بالاتر وجود یار لگے
وفا هیبت و کمال سے خالی نہ تھی کبھی.

امید کی بستی بستی تهی

” امید کی بستی بستی تھی “
ایک دشت میں کہیں پاس یہاں امید کی بستی بستی تھی
وہ بستی محنت کے بل پر
ہر دم ہستی بستی تھی
اس بستی سے تھوڑا دور وہاں
اک سوچ کا دریا بہتا تھا
اس دریا کے کنارے پر
اک قوسِ قزح بھی رچتی تھی
اس قوسِ قزح کے پہلو میں
اک جال بچھا سا رہتا تھا
جکڑ لیتا تھا وہ یکدم
جو چیز بھی اس میں گرتی تھی
اک روز وہاں اس جال میں
اک خواب کہیں سے آ ٹپکا
جال سے باہر نکلنے کی
بےسود ہر اک کوشش تھی
دھیرے دھیرے رنگ سوچوں کا
اُس خواب پے یوں چڑھنے لگا
مٹ کر اس سے ہر اک نقش
بےبسی رقص کرنے لگی
اس رقص کی پرچھائی سے
 قوسِ قزح مدہم هوئی
اور رنگ اپنے چھوڑ گئی
وہ ہستی بستی بستی پھر
ماند اچانک پڑنے لگی
ہر اک کونے میں اس نگری کے
خوف گھر کرنے لگا
اور خوشیوں کی اک کرن
منہ وہاں سے موڑنے لگی
یوں امید کی اس بستی میں
سوچوں کی تاریکی چھائی
اور یاس و الم کی بدلی نے
دکھ کی بارش برسائی

میں

“میں” 

 مجھے منزلوں کی خبر نہیں.
میرے راستے بھی عیاں نہیں.
مجھے جستجو ہے آس کی
میرے خواب مجھ سے جدا نہیں.
میرا آئینہ میرے حرف ہیں
میرے ضبط کو مجھ سے وفا نہیں.
جو بہار لے جاۓ مستقل
یہاں ایسی کوئی خزاں نہیں.
جلا تھا تیری طلب میں جو
وہ چراغ اب تک بھجا نہیں.

چلو آؤ

” چلو آؤ “
“سنانے والے کئی ہمدم
کئی فسانے سناتے جائیں
نئی رتوں کا نئی سحر کا
وہ ایک گیت گاتے جائیں
خوابوں میں چھپی کہانی
زمانے بھر کو سناتے جائیں
آ کے کتنے ہی رک گۓ
اسی راہ پر،بے خطر
چلو آؤ اک شام بِتاتے جائیں
یہ جو آ رہی ہے اک ہوا
یہی دے رہی ہے ہمیں صدا
چلو آؤ اسی کے دوش پر
اڑان اپنی بھرتے جائیں
دلِ مضطرب کسی موڑ پر
جو رکی ہو نبض کسی شور پر
اسی موڑ سے ، اسی شور سے
اک نئی ترنگ بناتے جائیں “

میرے آقا نے جب دعا دی مجھے

IMG_20161025_233710.jpg

 

راستوں پہ سجے هر طرف خار تھے

کاندھوں پہ لدے کئی بار تھے 

اسنے حبل الله سے ضیا دی مجھے

میرے آقا نے جب دعا دی مجھے

 

دل یاس و الم سے میرا چور تھا

اسکا جلوه مگر سر طور تھا

اس نے شفقت کی اپنی نوا دی مجھے

میرے آقا نے جب دعا دی مجھے 

 

میری مشکل ٹلی اور کھلے راستے

میرے جڑنے لگے رب سے واسطے 

 اسکی رحمت کی ردا دی مجھے

میرے آقا نے جب دعا دی مجھے

 

باغ دل کا معطر مہکنے لگا

گلوں بلبلوں سے چہکنے لگا

صبح نو کی ایسی ندا دی مجھے

میرے آقا نےجب دعا دی مجھے.

 

Rasaton pay sajay har tarf khaar thaay

Khandhon paay laday kaen baar thaay

Usnay Hab’liallah sy zaya di mujhy

Myray Aqa nay jub dua di mujhy.

 

Dil yas o alam sy myra choar tha

Uska jalwa magar sar e toar tha

Usnay shafqat ki apny nawa di mjhy

Myray Aqa nay jub dua di mujhy.

 

Mayri Mushkil Tali aur Khulay Rastay.

Myray jurnay lagyRab sy wastay.

Uski Rehmat ki rida di Mujhy,

Mayray Aqa nay Jub Dua di mujhy.

 

 

Bhag dil ka mua’tr mayhknay laga

Gul o bulbon say chayhknay laga

Subh e nau ki aysi nida di mujhy

Mayray Aqa nay Jub Dua di mujhy

 

Blog at WordPress.com.

Up ↑

%d bloggers like this: